پولیو کے قطرے
صحتمند زندگی،بیماریوں سے بچاؤ

پولیو کے قطرے

30 June, 2020

پولیو کے قطرے آخر ہیں کیا؟ 

پاکستان میں پچھلی کئی دہائیوں سے پولیو ویکسین پلانے کی مہم بڑے زور و شور سے چلائی جارہی  ہے۔ پورے ملک میں ٹیمیں پولیو کے قطرے لے کر گھر گھر جاتی ہیں اور ہر بچے کو قطرے پلانے کی کوشش کرتی ہیں۔ ماضی میں پولیومہم کے بارے میں عوام میں کافی تشویشناک خبریں گردش کرتی رہی ہیں جس کی وجہ سے لوگ بہت زیادہ محتاط ہو گئے ہیں اور ویکسین کے اس عمل کو ایک بڑی تعداد میں لوگ شک کی نگاہ سے دیکھتے ہیں۔ کئی جگہ پر پولیو ٹیموں پر حملے بھی ہو چکے ہیں جس کی وجہ سے اب ٹیموں کے ساتھ پولیس اہلکار بھیجے جاتے ہیں۔  اس مہم کے بارے میں  لوگوں میں پائی جانے والی بے چینی کے پیش نظر ہم  پولیو ویکسین سے متعلق چند سوالات کے جوابات دینے کی کوشش کریں گے۔


ویکسین کس چیز کا نام ہے؟

ویکسین جراثیم سے پھیلنے والی چھوتی بیماریوں سے بچنے کا ایک موثر طریقہ ہے۔ کسی بھی مرض کی ویکسین دراصل ایک ایسی دوائی ہوتی ہے جس میں اس مرض کے جراثیم اپنی ناکارہ حالت میں موجود ہوتے ہیں۔ یہ ناکارہ جراثیم جسم میں بیماری پھیلانے کی صلاحیت تو کھو چکے ہوتے ہیں ، البتہ جسم کا مدافعتی نظام ان ناکارہ جراثیموں کو پہچان کر ان کے خلاف مدافعت تیار کر لیتا ہے۔ اس کے بعد  اگر مستقبل میں کبھی اسی مرض کے فعال جراثیم جسم میں داخل ہوں تو جسم تیزی سے ان کو مار بھگاتا ہے۔ 

اس کی مثال یوں لیجئے کہ اگر جسم اگر ایک شہر ہے اور جراثیم اس شہر میں فساد پھیلانے والے ڈاکو، تو ویکسین کا کام دراصل شہر کے تھانوں میں ان ڈاکووّں کی تصویریں لگانا ہے تا کہ اگر کل کو یہ ڈاکو شہر میں داخل ہوں تو کسی واردات کے رونما ہونے سے قبل ہی پولیس یعنی جسم کا مدافعتی نظام ان کو مار بھگائے۔ 


پولیو کیا ہے ؟

پولیو ایک انتہائی خطرناک مرض ہے جس کا وائرس دماغ اور حرام مغز کو متاثر کرتا ہے۔ اس کی وجہ سے اعصاب یعنی  دماغ سے آنے والی بجلی کی تاریں مکمل طور پر تباہ ہو جاتے ہیں اور ان اعصاب سے جڑے  بازو اور ٹا نگیں کام کرنا چھوڑ دیتی ہیں۔ اس کا نتیجہ عمر بھر کی معذوری کی صورت میں نکلتا ہے۔   


پولیو کی ویکسین پلانے پر اس قدر زور کیوں دیا جاتا ہے؟

پولیو کا مرض بچوں میں زیادہ پھیلتا ہے اور بچوں کو دی جانے والی ویکسین کا اثر بھی ساری زندگی رہتا ہے۔ اس لئے ملک کی  آبادی کو زندگی بھر کے لئے پولیو سے محفوظ رکھنے کی خاطر بچپن میں ویکسین پلانے پر بہت زور دیا جاتا ہے۔ دنیا بھر میں ویکسین کے ذریعے پولیو کے مرض کا مکمل خاتمہ ہو گیا ہے۔ پاکستان ، افغانستان اور نائجیریا دنیا کے وہ آخری تین ممالک ہیں جہاں آج بھی یہ مرض پایا جاتا ہے۔ اس لئے حکومت کی خاص توجہ اس مرض کی روک تھام پر ہے۔ 

اگلے آرٹیکل میں ہم دیکھیں گے کہ عوام میں پولیو کے بارے میں کیا شکوک و شبہات پائے جاتے ہیں  اور ان شکوک کی حقیقت کیا ہے؟ 


ایک تبصرہ

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ مطلوبہ فیلڈز کو نشان لگا دیا گیا ہے *